We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

’اب کی بار آم زیادہ میٹھے ہوں گے‘

5 4 93
10.04.2019

لیجیے صاحب! گرمیاں آگئیں، اب آم آئیں گے۔ آپ یقین کریں یا نہ کریں لیکن ایسا پہلی بار نہیں ہوگا، کیونکہ آم پچھلی حکومتوں میں بھی آتے تھے۔ ایمان سے، ہم نے خود ان گناہ گار آنکھوں سے دیکھے اور گناہ بہ شکل گفتار کرتے منہ سے کھائے ہیں۔

یوں تو پچھلی حکومتوں میں بھی آم میٹھے ہی آتے تھے لیکن اس بار لگ رہا ہے حکومتی پالیسیوں کی وجہ سے کچھ زیادہ ہی میٹھے آئیں گے، کیونکہ آموں کو خود یہ خیال ہوگا کہ انگور کھٹے ہیں، اس لیے کم از کم ہم تو میٹھے ہوجائیں۔ آم بہت میٹھے ہوں گے اس لیے بہت زیادہ کھائے جائیں گے، کیونکہ یہ میٹھا میٹھا ہپ ہپ کڑوا کڑوا تُھو تُھو کا دور ہے، اور اگر کڑوا سچ کا ہو تو پھر تُھو تُھو کا سلسلہ دراز ہوجاتا ہے۔

صرف تُھو تُھو کرنے میں کوئی مضائقہ نہیں، مسئلہ تب ہوتا ہے جب ایک دوسرے پر تُھو تُھو ہوتی ہے اور بات ’تُو تُو میں میں‘ سے بڑھ کر ’تُھو تُھو میں میں‘ تک جا پہنچتی ہے۔ ان دنوں سچ کچھ زیادہ ہی کڑوا ہے، چنانچہ تُھو تُھو بھی زیادہ ہورہی ہے، اسی لیے اس موسم میں آم کہیں زیادہ کھائے جائیں گے۔

جب آم کی طلب بڑھے گی تو لازمی طور پر اس کی قیمت میں بھی اضافہ ہوگا۔ مگر آم مہنگے ہونے میں حکومت کا کوئی قصور نہیں ہوگا، کیونکہ ’انصاف‘ کی بات ہے کہ مہنگائی پچھلی حکومت کے کرتوتوں کی وجہ سے ہوتی ہے، نئے پاکستان کی نئی معاشیات کا سبق بھی یہی ہے۔ تو بات........

© Dawn News TV