We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

’شاہد بھائی، اب مَیں چلتا ہوں‘

4 0 0
02.06.2019

جانے پہچانے صحافی اور میرے بی بی سی کے ساتھی ادریس بختیار کے چلے جانے پر سوشل میڈیا پہ پوسٹوں کا تانتا بندھ گیا ہے۔ ایک ہر دلعزیز شخصیت کے لئے چاہنے والوں کے جذبات، ہمکار کارکنوں کی یادیں، صحافیانہ اقدار میں پیدا ہونے والا نیا خلا۔ اگر ادریس بختیار ہماری اعلی ثانوی درجہ کی کتاب ’چمن زارِ غزل‘ کے شاعر ہوتے تو میر تقی میر، حیدر علی آتش اور الطاف حسین حالی کی طرح اُن کے حالاتِ زندگی اور ’محاسن ِ کلام‘ پہ درمیانی طوالت کا مضمون بآسانی لکھا جا سکتا تھا۔ پاکستان بننے سے ذرا پہلے ریاست راجستھان میں پیدائش، حیدرآباد سندھ میں تعلیم، یکے بعد دیگرے کئی اخباروں سے وابستگی، پھر عرب نیوز، ہیرالڈ کراچی اور بی بی سی سے تعلق۔ پیشہ ورانہ دیانت، انسان دوستی اور دھیما پن۔ اِن اجزا کو ملانے سے شخصیت کا ہیولہ بن تو جاتا ہے، لیکن مَیں تو انہیں اپنے ہی زاویے سے دیکھوں گا اور کہوں گا کہ بس، میری مرضی۔

میری مرضی والی بات کا ایک پس منظر ہے۔ وہ یہ کہ آج سے کوئی تِیس سال پہلے بی بی سی کے نامہ نگار اور ڈان کے موجودہ ایڈیٹر ظفر عباس کو پیشہ ورانہ وجوہات کے علاوہ ایک مخصوص تنظیم کے ’حسن ِ سلوک‘ کے پیشِ نظر کراچی سے اسلام آباد بھیج دینے کا فیصلہ ہوا تو اُنہی کے ایما پر ادریس بختیار بی بی سی کے رپورٹنگ نیٹ ورک کا حصہ بن گئے۔ لندن سے میری فون کال پر ادریس صاحب کے تعارف میں ظفر نے بے تکلفی کے لہجہ میں کہا ”شاہ جی، ہے تو جماعتیا مگر بہت اچھا صحافی اور دیانت دار آدمی“۔ اِس موقعے پر اُنہوں نے معروضی اور جرات مندانہ اخبار نویسی کی پاداش میں اُس تنگ دستی کا اشارہ بھی دیا تھا جس سے ادریس بختیار کو با رہا دوچار ہونا پڑا۔ خدا جانتا ہے کہ پہلے دن سے اُنہیں کام کے لحاظ سے جیسا سُنا تھا، ویسا ہی پایا۔ مستعد، بے غرض، جرات مندانہ، نوجوانوں کے لئے قابلِ تقلید مثال۔

یہ تو ہوا لندن اور کراچی میں رہتے ہوئے ہمارا ابتدائی پیشہ ورانہ تعلق، جو نہایت خوشگوار، مگر محدود نوعیت کا تھا۔ خوشگوار ذاتی اوصاف ہوتے کیا ہیں اور بناوٹ سے عاری شائستگی کہتے کسے ہیں؟ یہ اُس وقت پتا چلا جب نئی صدی شروع ہونے سے پہلے زندگی میں پہلی بار ہم اسلام آباد آفس میں ملے تھے۔ وطنِ عزیز، خاص طور پہ میرے آبائی صوبے میں، ایک ساتھ کام کرنے والوں کے تعلقات آج کل........

© Daily Pakistan (Urdu)