We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

میں مولو مُصلّی ہوں!

22 14 0
02.07.2019

اخوت والے ڈاکٹر امجد ثاقب سے میرا درد کا رشتہ ہے، وہ مولو مصلیوں سے محبت کرتے ہیں اور میں خود مولو مصلّی ہوں۔ گو میری اور مولو کی ذات برادری الگ ہے لیکن جب بھی میری روح کا استحصال ہوا، جب بھی مجھے نفرت اور حقارت سے دیکھا گیا، جب بھی تکبر و غرور اور دولت و جاہ پسندی نے مجھے دبایا میں مولو مصلّی کے احساسات سے گزرا۔ پہلی بار میں مولو مصلّی اس دن بنا جب ساتویں جماعت کے طالب علم اور ایک لوئر مڈل کلاس خاندان کے بچے کی حیثیت سے دولتمند اشرافیہ کے ایک گھر میں شادی کے سلسلے میں گیا ہوا تھا کہ وہاں بجلی کا میٹر ریڈر آیا تو میں کھیلتے کھیلتے اسے شاہانہ کوٹھی کے میٹر کے پاس لے گیا۔ ریڈر بولا یہ تو بدعنوانی ہے، میٹر بند ہے اور بجلی چل رہی ہے۔ نوعمر لڑکے نے زندگی میںکرپشن کو پہلی بار دیکھا اور سنا تھا۔ اس نے شور مچا دیا، اسی دوران کوٹھی کی جاگیردار مالکن آئی اور اس نخوت اور نفرت سے لڑکے کی طرف دیکھا کہ اس چہرے کی عیاری اور سفاکی اتنے سال گزرنے کے باوجود آج بھی مجھے یاد ہے۔ ساتھ ہی اس نے جھڑک کر مجھے گھر سے نکال دیا۔ یہ میری زندگی کا وہ پہلا دن تھا جب میں مولو مصلّی بنا اور آج تک اپنی اس ذلالت اور بے بسی کو بھلا نہیں پایا۔

دوسری بار مجھے خجالت اور حقارت کا احساس تب ہوا جب زمانہ طالب علمی میں ہی ایک نوکر شاہ سے ملنے اس کے دفتر گیا۔ معاملہ گنے کے پرمٹ کا تھا، اس نوکر شاہ نے مجھے کئی گھنٹے دفتر کے باہر........

© Daily Jang