We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

سری لنکا کا نائن الیون اور ہمارا اجتماعی رویہ

4 1 0
27.04.2019

21اپریل کا اتوار، یومِ ایسٹر، سری لنکن مسیحیوں کے لئے کسی قیامت سے کم نہ تھا، جب یہ لوگ جناب مسیح علیہ السلام کے دوبارہ جی اُٹھنے کی خوشی یعنی اپنی عید کی مذہبی عبادات کے لئے گرجا گھروں میں منہمک تھے، عین اُس وقت خود کش حملہ آوروں نے اُنہیں خون میں نہلا دیا۔ اِس حملے میں اذیت ناک موت مرنے والوں کی تعداد 359تک پہنچ چکی ہے جبکہ زخمیوں کی تعداد پانچ سو سے بھی اوپر ہے۔ یقیناً یہ سانحہ سری لنکا کا نائن الیون ہے، جس سے پوری دنیا کی مہذب اقوام اور درد مند انسان دل گرفتہ ہیں۔ جس وقت یہ تفصیلات آرہی تھیں سب اپنے اپنے تخمینے پیش کر رہے تھے۔ ایسے بھی تھے جو انڈیا کی طرف کھرا تلاش کرنے میں کوشاں تھے، دور کی کوڑیاں لانے والے اِس کے ڈانڈے امریکہ سے ملانا چاہ رہے تھے۔ عین اُس وقت دوستوں سے عرض کی کہ اگر آپ لوگ مائنڈ نہ کریں تو ناچیز کو یہ ساری کارستانی ایک مخصوص مائنڈ سیٹ کی دکھائی دیتی ہے، آواز آئی کہ آپ کو تو ہر وقت اپنے آپ سے ہی شکایت رہتی ہے۔

اِن خوفناک خودکش حملوں اور بم دھماکوں کے بعد معروف جہادی تنظیم داعش یعنی ISISنے اپنی آن لائن نیوز ایجنسی اعماق کے ذریعے اِن کی ذمہ داری قبول کی اور اِس کی تفصیلات بھی جاری کیں۔ برطانوی اخبار گارڈین نے اِن خود کش حملہ........

© Daily Jang