We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

دونوں کے فرق کو جان کر جیو

3 0 4
30.03.2019

صادق ایجرٹن کالج بہاولپور میں انگلش کے ہیڈ آف ڈپارٹمنٹ پروفیسر خالد حمید حسبِ معمول 8بج کر چالیس منٹ پر کالج پہنچے مگر وہ اس بات سے بے خبر تھے کہ انہی کا ایک طالب علم جو مذہبی شدت پسندوں کے زیر اثر تھا، ایک تیز دھار چھری لئے کمرے کے باہر ستون کی آڑ میں چھپا کھڑا تھا۔ پروفیسر صاحب جونہی اپنے کمرے میں داخل ہوئے اس نے پہلے ایک وزنی آہنی تالا اُن کے سر میں مارا اور پھر چھری کے پے در پے وار کرتے ہوئے اُن کے چہرے، آنکھوں اور سینے کو چھلنی کر دیا۔ پروفیسر صاحب کو شہید کرنے کے فوری بعد یہ قاتل رنگے ہاتھوں پکڑا جاتا ہے اور کہتا ہے کہ استاد غیر اسلامی باتیں کرتا تھا، اس لئے میں نے اُسے مار کر بہت اچھا کیا ہے۔ اُس قاتل سے کہا جاتا ہے کہ اگر تجھے کوئی شکایت تھی تو توُ انتظامیہ یا قانون کو پیش کرتا، جواب دیتا ہے، قانون تو ہے ہی نہیں، قانون کچھ کر ہی نہیں سکتا۔ پوچھ گچھ کرنے پر معلوم ہوتا ہے کہ پروفیسر صاحب کالج انتظامیہ کے فیصلے کی مطابقت میں حسب روایت نئے آنے والے طلباء و طالبات کی فیئر ویل پارٹی کا اہتمام کر رہے تھے، جس پر اس طالب علم کو اعتراض تھا کہ کالج میں غیر اسلامی تقریب کیوں ہونے جا رہی ہے اور اس پر ماقبل اس طالب علم نے پروفیسر صاحب سے بد زبانی یا تلخ کلامی بھی کی تھی۔

پروفیسر خالد حمید بیچارے بے دردی سے قتل ہو گئے، اب اگر یہ قاتل پھانسی بھی لگ جائے تب بھی کسی........

© Daily Jang