We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

کرائسٹ چرچ کا درد ناک سانحہ اور وجوہ؟

6 0 2
23.03.2019

نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی دو مساجد میں ایک انتہا پسند آسٹریلوی نے نماز جمعہ کے دوران بے گناہ نمازیوں پر ظلم و ستم کی جو انتہا کی ہے، اُس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔ پچاس سے زائد انسانوں کو موت کے منہ میں دھکیلتے اور درجنوں کو زخمی کرتے ہوئے اُس بد بخت‘ انسانیت سے گرے ہوئے شخص نے سوچا کہ اِس طرح دنیا سے مسلمان ختم ہو جائیں گے یا اُن کا مذہب کہیں دب جائے گا۔ اُس نے 74صفحات کا جو منشور دیا ہے، وہ بھی منافرت سے پُر ہے کہ جب تک دنیا میں ایک بھی سفید فام موجود ہے، مسلمان ان کے ممالک پر قبضہ نہیں کر سکتے۔ قابلِ اطمینان بات یہ ہے کہ دنیا میں کیا سفید فام کیا سیاہ فام، کیا مذہبی کیا غیر مذہبی بشمول یہود، مسیحی، ہندو، بدھ، سکھ ہر کسی نے اِس اندوہناک سانحہ کے خلاف آواز بلند کی ہے اور دنیا بھر کے مسلمانوں سے اظہارِ یکجہتی کیا ہے۔کرائسٹ چرچ میں یہودیوں اور مسیحیوں نے مسلمانوں کے لیے نہ صرف اپنی عبادت گاہوں کے دروازے کھول دئیے بلکہ مسلمانوں سے اظہارِ ہمدردی کے لیے انتہا پسندی کا نشانہ بننے والی مساجد میں پہنچے اور اُن کے باہر پھولوں اور اپنے درد مندانہ پیغامات سے بھرے کارڈوں کی بھرمار کر دی۔ کرائسٹ چرچ کی بڑی یونیورسٹی میں مسلمانوں سے اظہارِ یکجہتی کے لیے اذان کی آواز یوں گونجی جیسے سبھی اذانیں دے رہے ہوں اور سینکڑوں طلبہ ادب سے کھڑے ہو کر........

© Daily Jang