We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

اولڈ مین بنام مسٹر یوتھ

11 29 410
20.03.2019

از پرانا پاکستان

20مارچ2019ء

مائی ڈیر مسٹر یوتھ!

ڈھیروں پیار اور دعائیں، امید ہے تم اپنی جوانی سے بھرپور لطف اندوز ہو رہے ہو گے، آج کل تو تمہارے اِس لئے اور بھی مزے ہیں کہ بوڑھی نسل نے اقتدار ہی نوجوان نسل کو منتقل کر دیا ہے۔ علامہ اقبال نے وصیت کی تھی ’’جوانوں کو پیروں کا استاد کر‘‘ اور ہم بوڑھوں نے 2018کے انتخابات میں اس وصیت پر عمل کر کے تمہاری بات مان لی۔ ہم میں سے کئی، بہت عرصے سے پیپلز پارٹی کو ووٹ دے رہے تھے اور کچھ پکے ن لیگی ووٹرز تھے مگر تمہاری ضد کے سامنے ہم نے ہار مان لی، تم بار بار کہتے تھے کہ آپ سب کو آزما چکے ہیں، ایک بار اِسے بھی آزما لو۔ ہم ٹھنڈے دل سے دلائل دیتے رہے، تمہیں تمہارے لیڈر کے ’’نیک و بد‘‘ بتاتے رہے مگر تمہاری جذباتیت اور منتوں کے آگے بڑھاپا بےبس ہو گیا۔ تم سے پیار بھی تھا اِس لئے تمہارے حق میں فیصلہ کر دیا۔

پیاری یوتھ!

بوڑھے باپ، شفیق چاچے اور مامے، معمر دادے اور نانے اور بڑھتی ہوئی عمر کی مائیں، بہنیں اور بھابھیاں سب نے اپنا وزن تمہارے پلڑے میں ڈالا، تماری آنکھوں میں مستقبل کے سہانے خواب دیکھ کر ہم نے اپنے تجربے اور عقل کو بھی پس پشت ڈال دیا، ہمیں بہت کچھ صاف نظر آرہا تھا مگر تمہاری محبت نے ہماری آنکھیں دھندلا دیں۔ صرف اتنا ہی نہیں ہم نے تبدیلی آنے کے بعد خود بھی تبدیل ہونے کی بھرپور کوشش کی۔ اولڈ جنریشن کے لئے تبدیلی بڑی مشکل ہوتی ہے مگر ہم نے حتی المقدور کوشش کی کہ ہم ’’نئے پاکستان‘‘ کے ساتھ چل سکیں، اور تو اور ہمیں زندگی بھر مہنگائی سے نفرت رہی لیکن نئے پاکستان کی مہنگائی سے بھی محبت کرنے کی کوشش کی، کئی دفعہ محفلوں میں مہنگائی کے فوائد بیان کئے اور یہ ثابت کرنے کی کوشش کی کہ مہنگائی تو بڑی اچھی اور کارآمد چیز ہے، جس سے ملک........

© Daily Jang