We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

وزیراعظم کے تین مثبت اقدام

5 3 22
09.03.2019

وزیراعظم عمران خان سے، اُن کی سیاست پر ہمیں ایک سو ایک اختلافات ہو سکتے ہیں۔ سیاسی نہ ہوتے ہوئے بھی جس طرح وہ برسر اقتدار آئے، اُس سب پر جرح و تنقید کے ایک سے بڑھ کر ایک مقامات آہ و فغاں موجود ہیں۔ یہ بھی کہا جا سکتا ہے کہ وہ جن مسائل پر اپنے سیاسی مخالفین کو پیہم موردِ الزام ٹھہراتے رہے، آج وہ خود اُن تمام مسائل پر ایمان کامل لا چکے ہیں۔ ہم نے کرکٹ کے اِس سابق کھلاڑی اور موجودہ وزیراعظم پر بہت سے تنقیدی مضامین لکھے ہیں مگر آج اس خوگرِ تنقید سے تھوڑی سی توصیف بھی سن لیں۔

حالیہ دنوں میں وزیراعظم نے اپنے غیر ذمہ دارانہ اظہارِ خیال یا طرزِ اظہار کا کسی حد تک دھونا دھونے کی کوشش کی ہے۔ انڈین حکومت کے جنگی بخار پر اُنہوں نے کسی نوع کی اشتعال انگیزی دکھانے کے بجائے اپنی امن پسندی کا پیغام بھیجا۔ ضیاء الحق مرحوم کہا کرتے تھے کہ میں بھارت پر امن کے حملے کرتا رہوں گا۔ اِن دنوں یہی کردار عمران خان نے اتنی خوبصورتی سے نبھایا ہے کہ خود بھارت کے اندر سے اُن کے حق میں کئی آوازیں بلند ہوئی ہیں۔ اِس سلسلے میں اُنہوں نے جو دو تقاریر کی ہیں وہ دونوں ہی مختصر الفاظ کا چناؤ کرتے ہوئے جامع پیغام کی حامل تھیں۔ اُن کے بالمقابل وزیراعظم مودی نے اپنے جلسوں میں جس نوع کی بونگیاں چھوڑی ہیں، اُن پر خود مودی کے حامی بھی سر پکڑ کر بیٹھ گئے ہیں۔ سیانے کہتے ہیں ایک جھوٹ کو چھپانے کے لئے کئی جھوٹ بولنا پڑتے ہیں۔ بھارتی حکومت نے سرجیکل اسٹرائیک کے حوالے سے جن نام نہاد ہلاکتوں کی درفنطنی چھوڑی تھی اگرچہ مقصد اُس کا اپنے........

© Daily Jang