We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

مختصر 10 سال…بنام…طویل 7 ہفتے

10 1 1
12.10.2018

مختصر 10 سال…بنام…طویل 7 ہفتے

ملکی تاریخ میں ایسا دوسری بار ہو رہا ہے۔ پہلی مرتبہ نہیں۔

اس سے پہلے شہید بھٹو کے خلاف ایک انجینئرڈ ہولی الائنس بنایا گیا تھا۔ پی این اے المعروف پاکستان نیشنل الائنس ‘ جس کے نو ستاروں میں سے جن کو پڑھنا لکھنا آتا تھا‘ اُنھوں نے اس الائنس پر بے لاگ کتابیں لکھ ڈالیں ۔ مرحوم پروفیسر غفور صاحب اور مولانا کوثر نیازی مرحوم کی کتابیں بلاک بسٹر ثابت ہوئیں ۔ 'اور لائن کٹ گئی‘ جیسی سُپر ہٹ دستاویزات ۔ اُس وقت کی حکومت اور اپوزیشن کے لکھاری رہنمائوں نے اس ہولی الائنس کے پیٹ سے عالمی اسٹیبلشمنٹ اور اُس کے مقامی گماشتوں کو ڈھونڈ دھونڈ کر بے نقاب کر ڈالا۔ ہماری تب کی سیاسی تاریخ کا یہ اولین موقع تھا جب بھٹو بمقابلہ باقی سارے کے سارے (Bhutto Versus All) والی سیاسی اصطلاح سامنے آئی۔ اس سے آگے کی تاریخ آج کا مو ضوعِ گفتگو نہیں ۔ پھر کبھی سہی ۔

اتوار کا دن وزیرِ اعظم عمران خان کے ساتھ لاہور میں گزرا۔ تقریباً شب 9 بجے تک ۔ اس دوران وزیرِ اعظم نے کرپشن یونین کو للکار دیا ۔ ہولی الائنس سے کرپشن یونین تک ۔ ایک طرف وہ سارے کردار ہیں ‘ جن کا سیاسی ورثہ ہولی الائنس کے نتیجے میں بننے والی فوجی حکومت کی مہربانی اور نگرانی کے سوا اور کچھ نہیں۔ نہ سیاسی جدوجہد نہ مادرِ وطن کے لیے خدمت و قربانی ۔ بلکہ اکثر کے آبائواجداد یا تو آل انڈیا کانگریس کے ہم نوالہ اور ہم پیالہ تھے‘ یا بابائے قوم حضرتِ قائد اعظمؒ کے آرچ مخالف۔ بیان باز سے فتویٰ باز تک ۔

آج پاکستان کی سوسائٹی ایک دلچسپ مرحلے سے گزر رہی ہے ۔ اسے ہر اعتبار سے 'اینٹی سٹیٹس کو‘ کا زمانہ کہا جائے گا‘ جس کی دو بنیادی علامتیں سب کے سامنے ہیں ۔ پہلی یہ کہ مرکز، پنجاب اور کے پی کے کی حکومتیں وہ کچھ نہیں کر رہیں‘ جیسے کہ........

© Roznama Dunya