We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

کشمیر پر پاک بھارت مذاکرات کی تجویز

3 0 0
13.01.2018

کشمیر پر پاک بھارت مذاکرات کی تجویز

مقبوضہ ریاست‘ جموں و کشمیر کی وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی نے کہا ہے کہ ریاست میں موجودہ صورتحال کو بہتر بنانے کے لیے ضروری ہے کہ پاکستان سے بات چیت شروع کی جائے۔ محبوبہ مفتی نے اس نوعیت کا بیان پہلی دفعہ نہیں دیا ہے اس سے قبل بھی وہ بھارتی وزیراعظم نریندرمودی کی حکومت کو مشورہ دے چکی ہیں کہ کشمیر میں نہتے عوام کو دبانے اور نوجوانوں کو گولیوں کا نشانہ بنانے کی بجائے مذاکرات کا راستہ اختیار کیا جائے اور اس ضمن میں انہوں نے تجویز بھی دی تھی کہ سابق وزیراعظم اٹل بہاری واجپائی کے دور میں پاکستان اور بھارت کے درمیان جو امن اور مذاکراتی عمل شروع کیا گیا تھا‘ اُسے بحال کیا جائے کیونکہ اس سے نہ صرف پاکستان اور بھارت کے درمیان امن قائم ہو سکتا ہے بلکہ کشمیر کے حتمی حل کی بھی راہ نکل سکتی ہے‘ یہ رائے صرف وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی تک محدود نہیں ہے۔ ریاست جموں و کشمیر کی باقی قیادت مثلاً حریت کانفرنس بھی اسی رائے کی حامی ہے اور اُن کا استدلال یہ ہے کہ جب تک کشمیر پر مذاکرات میں پاکستان کو شامل نہیں کیا جاتا، کشمیر کا مسئلہ نہ صرف حل طلب رہے گا بلکہ تشدد اور تباہی میں مزید اضافہ ہو گا۔ حریت کانفرنس کے مرکزی لیڈر میر واعظ عمر فاروق کئی بار کہہ چکے ہیں کہ پاکستان اور بھارت کو مل کر کشمیر کے مسئلے کا حل کشمیریوں کی خواہشات کے مطابق ڈھونڈنا چاہیے۔ میرواعظ عمر فاروق کے اس موقف کو عالمی سطح پر بھی تائید حاصل ہے۔ اس وقت بین الاقوامی برادری میں اس بات پر مکمل اتفاق پایا جاتا ہے کہ پاکستان اور بھارت کو دوطرفہ بنیادوں پر‘ پُرامن مذاکرات کے ذریعے کشمیر کا مسئلہ حل کرنا چاہیے اور اس میں مزید تاخیر نہیں ہونی چاہیے کیونکہ پاکستان اور........

© Roznama Dunya