We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

بیمارجنرل پرویز مشرف کے لئے نرم گوشہ

3 0 0
09.11.2018

کمرے میں موسیقی کی خوشبو بکھری ہوئی تھی، سبھی لوگ کسی نہ کسی حوالے سے موسیقی سے وابستہ تھے۔ڈھولک نواز ردھم چھیڑنے کے لئے بازو چڑھا چکا تھا۔۔۔ مَیں نے بھی انگلیاں ہارمونیم پر جما دیں، دُھن اور بول ایک دوسرے کے ساتھ بغلگیر ہوئے تو ردھم والے نے بھی بھرپور ساتھ دیا۔۔۔ سامنے ٹی وی چل رہا تھا، مگر ہم نے اس کی آواز بند کر رکھی تھی، تاکہ موسیقی کے کام میں خلل نہ پڑے، مگر ترچھی نگاہوں سے ہر ایک سکرین کی طرف بھی دیکھ رہا تھا، کسی اشتہار میں اگر کوئی خوبصورت لڑکی نظر آتی تو بعض دوست آنکھوں ہی آنکھوں میں اسے دِل میں بھی اتارنے کی کوشش کرتے، مگر حقیقی دھیان دھن اور الفاظ کے علاوہ اب ردھم کی طرف تھا،

مَیں نے الاپ اٹھایا تو ایک دو بار کے الاپ کے بعد اندازہ ہوا کہ ہم ایک گیت تخلیق کرنے میں کامیاب ہو چکے ہیں، تمام احباب نے حسبِ عادت تعریف میں زمین و آسمان کے قلابے ملا دیئے،ہم نے بھی روایتی شکریے کے ساتھ خود کو ساتویں آسمان پر محسوس کیا۔۔۔ اور لڑکے کو چائے کا آرڈر دیتے ہوئے ایک بار پھر ہارمونیم پر انگلیاں رکھ دیں۔۔۔مگر یہ کیا۔۔۔ اچانک ٹی وی کی سکرین پر مکھیاں ناچنے لگیں۔۔۔ ہم نے لڑکے سے ٹی وی بند کرنے کا کہا ہی تھا کہ اچانک لائٹ چلی گئی۔۔۔ نجانے میری چھٹی حس نے مجھے کِسی گڑ بڑ کا احساس کیوں دلایا۔۔۔حالانکہ ہمارے ہاں بجلی جانے یا ٹی وی سکرین پر مکھیاں اُڑنے کی بات کوئی نئی نہیں ہے۔گھر کی منڈیر پر کوا آ بیٹھے تو ٹی وی گیا۔۔۔ اور اگر کسی تار یا کھمبے پر چڑیا پھڑ پھڑائے تو بجلی گئی۔۔۔ مَیں نے بجلی کمپنی کے آفس فون ملایا تو معلوم ہوا فون بھی مرا پڑا ہے۔

دس پندرہ منٹ بعد جب ہم لوگ کمرے سے نکل کر برآمدے میں آئے اور باہر کا منظر دیکھا تو گھپ اندھیرے میں نیلی پیلی روشنی والی گاڑیاں سڑک پر بھاگتی نظر آئیں۔۔۔ ٹریفک بھی نہ........

© Daily Pakistan (Urdu)