We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

نوحہ

6 0 1
14.01.2018

رہنما موقع پرست نہیں ہوتے۔برے حالات میں بھی وہ قوم کو پژمردگی کی بجائے امید اور امنگ دیتے ہیں۔ہمارے رہنماو ادارے کس ڈگر پر چل نکلے ہیں،قوم کو راہ ِروشن دکھانے کی بجائے اسے اندھیرنگری کی جانب دھکیل رہے ہیں۔آئے روز کوئی نہ کوئی ایسا واقعہ ہو جاتا ہے جس پر ہر ایک اپنی دکان سجا لیتا ہے۔اپنی منفعت کے لئے جعلی مصنوعات تھوک کے حساب سے بیچی جاتی ہیں۔
کوئی مقبولیت کے لئے ایسا کرتا ہے۔کسی نے اپنا ووٹ بینک بڑھانا ہے۔کچھ دیوانے تو خواہ مخواہ اچھل کود کرتے ہیں۔سب سے بڑھ کر تو ہمارے ذرائع ابلاغ جو ریٹنگ کے چکر میں سب حدودپامال کر رہے ہیں۔نئے سال کے آغاز پر ہی ہمارے محترم’’تبدیلی خان‘‘نے بہت سادہ اقدام کو نہ صرف پیچیدہ بلکہ بین الاقوامی شہ سرخیاں بنا دیا۔خان کی مس ہینڈلنگ کی گرد ابھی بیٹھی نہ تھی کہ قصور میں ہوشربا واقعہ پیش آگیا۔
میری جگر گوشی زینب کیساتھ جو روح فرسا واقعہ پیش آیا اس پر لغت سے ایسے الفاظ میسر نہیں کہ میں اس درد کا اظہار کر سکوں۔
زینب کے واقعہ کو کوئی شہباز شریف کا برا طرزِ حکومت قرار دے رہا ہے۔یقیناََذمہ داری ان ہی کی بنتی ہے مگر چھاج بولے سو بولے چھلنیاں بھی ایڑی چوٹی کا زور لگا رہی ہیں۔ایک چھلنی کے صوبے میں ابھی چند ہفتے قبل ہی حوا کی بیٹی کو برہنہ کر کے سرِبازار گھمایا گیا۔دوسری چھلنی کے صوبے کے گوٹھوں میں کیا........

© Daily Jang