We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

ہمارا میڈیا اور نظام عدل

7 2 2
18.11.2017

مجھے لگتاہے کہ صرف عام آدمی ہی نہیں خواص بھی ہمارے نظام عدل سے مطمئن نہیں ہے ۔ عام آدمی بچارہ تو عدالتوں میں دھکے کھاتا پھرتا ہے، کسی کے بھی خلاف کوئی جھوٹا مقدمہ ہی دائر کیوں نہ کر دیا جائے اس کی عمر کا ایک حصہ اسی کارروائی میں ’’خرچ‘‘ ہو جاتا ہے۔ اوپر سے ہماری عدلیہ میں کچھ ایسے لوگ بھی رہے ہیں جو میڈیا کے دبائو میں آجاتے ہیں، مجھے یاد ہے کہ ایک بار میں نوائے وقت کے دفتر میں بیٹھا بطور سب ایڈیٹر خبریں ایڈٹ کررہا تھا، اتنے میں ایک شخص جو ساٹھ برس کے قریب تھا جس کی شیو اور سر کے بال بے ہنگم طور پر بکھرے ہوئے تھے اور جس کے چہرے سے وحشت ٹپک رہے تھی، نیوز روم میں داخل ہوا اور اس نے پاگلوں کی طرح چیخنا شروع کردیا۔ اس کو بڑی مشکل سے نارمل کیا گیا، پتہ چلا کہ اس پر کسی نے قتل کا جھوٹا مقدمہ قائم کیا اور میڈیا نے اسے اپنی شہ سرخیوں میں باقاعدہ قاتل بنا کر رکھ دیا۔ چنانچہ عدالت میں اس کے خلاف بیس سال مقدمہ چلا۔ یہ سارا عرصہ اس نے جیل میں گزارا اور بالآخر اس کو عدالت نے اپنے فیصلے میں بے گناہ قرار دے دیا۔ اس شخص کے ہاتھ........

© Daily Jang