We use cookies to provide some features and experiences in QOSHE

More information  .  Close
Aa Aa Aa
- A +

امریکی انتخابات:ایک بڑی پیش گوئی

8 2 28
09.11.2018

برائون لڑکے نے سگنل پر سڑک پار کرتے ہوئے برائون لڑکی سے کہا ’’سنو! کارل مارکس اب تک جدید فلاسفر ہے اور مارکسزم ایک جدید ترین نظریہ‘‘۔ مجھے اپنے کانوں پر یقین نہیں آیا کہ میں نیویارک میں ہوں یا کلکتہ میں۔ کیونکہ کراچی اور کوئٹہ میں اس طرح کی باتیں کرتے ہوئے شاید آج بھی مڑ کر اپنے کاندھوں کے اوپر دیکھنا پڑتا ہو۔ لیکن میں نے خزاں کی بارش کی پڑتی ہوئی ہلکی پھوار اور اس سے دھلی سڑک اور اس پر اڑتے زرد سرخ پتے اور ان پتوں میں ڈیموکریٹک خاتون امیدوار کلیٹیلینا کروز کی تصویر والے پھٹے پوسٹروں کے پنے دیکھے تو یاد آیا میں نیویارک میں ہوں اور وسط مدتی امریکی انتخابات کی پولنگ امریکی مشرقی ساحل پر کچھ لمحے پہلے ہی ختم ہو چکی تھی۔ ٹرمپ کی حکمراں ریپبلکن پارٹی سینیٹ میں اپنی اکثریت برقرار رکھ چکی تھی۔ لیکن کانگریس میں ڈیمو کریٹک اکثریت سے آ چکے تھے۔ میرے علاقے میں کرشمہ یہ ہوا کہ چوبیس سالہ نوجوان خاتون الیگزینڈریا اوکاسیو کورٹیز پوری امریکی کانگریس میں سب سے کم عمر رکن کے طور پر منتخب ہوئی۔ میں نے اس علاقے میں پولنگ اسٹیشن پر تارکین وطن ووٹر کا شام گئے ایک خاصا ٹرن آئوٹ دیکھا تھا حالانکہ گھن گرج سے باہر بارش برس رہی تھی۔ لیکن طوفان یا برفباری سے امریکہ میں کون سے کام بند ہوئے ہیں؟ چھٹی تو انتخابات کے دن ہوتی ہے نہ گیارہ ستمبر والے سوگ کے دن۔

ان امریکی وسط مدتی انتخابات کی ایک خاص بات یہ تھی کہ ان میں کافی تعداد خواتین امیدواروں کی تھی۔ پھر بھی امریکی کانگریس........

© Daily Jang